Buzcorner
right way » blog » اللہ تعالی کی یاد اور شیطان کی چال

اللہ تعالی کی یاد اور شیطان کی چال

ایک شخص ہر روز رات کی تنہائی میں اللہ تعالی کا ذکر کیا کرتا تھا۔ اس کام میں اس نے کبھی بھی ناغہ نہ کیا تھا۔ ایک دن شیطان نے اس کے دل میں وسوسہ ڈال دیا کہ اے شخص تو ہر روز رات کو اللہ اللہ کرتا ہے اور ایک مدت گزر گئی اس کام کو کرتے ہوئے لیکن کیا کبھی ایک بار بھی اللہ تعالی کی بارگاہ سے جواب میں لبیک ہوئی ہے۔ تو کس عاجزی اور انکساری سے اللہ کی ضربیں لگاتا ہے لیکن بارگاہ خداوندی سے تجھے ایک جواب تک نہیں آیا۔ اس شخص کے دل میں اس خیال کا آنا تھا کہ وہ پریشان ہو گیا اور شکستہ خاطر ہو کر لیٹ گیا خواب میں اسے حضرت خضر علیہ السلام کی زیارت ہوئی آپ نے اس سے پوچھا اے اللہ کے بندے تو اللہ کے ذکر سے کیوں رک گیا ہے۔

وہ شخص کہنے لگا میں تو ہر رووز اللہ اللہ کرتا ہوں لیکن جواب میں میرے پاس لبیک نہیں آیا۔ اس لیے میں اس بات سے ڈر گیا کہ شائد میں اللہ تعالی کی بارگاہ میں مردود ہوں ۔ یہ سن کر حضرت خضر علیہ السلام نے فرمایا اے شخص اللہ پاک نے مجھ سے فرمایا کہ جا میرے اس بندے سے کہہ دو کہ تیرا اللہ اللہ کہنا میرے ہی کرم کی وجہ سے ہے کیا میں نے تجھے اپنے کام میں نہیں لگا رکھا ہے۔ تیری طلب تڑپ کا سب مجھے پتہ ہے میں تجھے بھولا نہیں ہوں نہ ہی میں نے تجھے نظر انداز کیا ہے۔

Read This:  حضور ﷺ کی امت کے کون سے ایسے لوگ ہیں جوجنت میں جائیں گے

تیری ہر پکار پر اور ہر بار اللہ کہنے پر میں تجھے ہزار بار لبیک لبیک کہتا ہوں۔ تجھے یہ سوچ یہ عمل یہ طلب میں نے ہی دی ہے اور میں نے ہی تجھے اس کام پر لگا یا ہے اور اصل میں تجھ سے زیادہ مجھے ہی تیرا اشتیاق و شوق ہے۔ اس شخص نے یہ خواب دیکھا تو ہڑبڑا کر اٹھ گیا اور فوراصدق دل سے تائب ہوا اور پھر دوبارہ اللہ تعالی کے ذکر میں مشغول ہو گیا۔

Share

sana jamshed

Add comment