Buzcorner
right way » blog » اتنا پیار دو جتنا لینے والے کا حوصلہ ہے

اتنا پیار دو جتنا لینے والے کا حوصلہ ہے

اتنا پیار دو رخشندہ اپنی استانی کے پاس آٴیٴ تھکی ہویٴ اور روہانسو۔ بولی مس میں لوگوں سے اچھی طرح ملتی ہوں مگر میرے ساتھ کوءی بھی ۔۔۔۔

مس نے رخشندہ کودیکھا اور بولیں ایک کہانی سناتی ہوں اس پر غور کر و۔

کسی گاوٴں میں ایک اژدھا آگیا کویٴ قریب سے بھی گزرے تو اس کی پھنکار سے ہاتھ پاوٴں پھول جاتے تھے۔ اژدھے کی وجہ سے لوگوں کو آنے جانے کےلیے بہت دور سے گھوم کر جانا پڑتا تھا۔ پورا گاوٴں پریشان تھا کہ ایک دن ایک بزرک گاوٴں میں داخل ہوےٴ۔ گاوٴں والے ان کی خدمت میں فوراحاضر ہوءے اور اژدھے کے بارے میں بتایا۔

اتنا پیار دو

وہ بزرگ اژدھے کے قریب گءے اور اس کو زور سے ڈانٹ دیاکہ لوگوں کو تنگ کرتا ہے۔ کچھ عرصہ بعد بزرگ کا اس گاوٴں سے پھر گزر ہوا۔ دیکھا کہ اژدھا سوکھ کر کانٹا ہو گیا ہے اور بچے اس پر سواری کر رہےہیں۔بزرگ نے اژدھے سے کہا کہ یہ کیا ہو گیا تمہیں؟ اس نے کہا آپ نے ہی تو منع کیا تھا تو اب یہ حال ہے بزرگ بولے ارے بھیٴ کبھی کبھی پھوں پھاں بھی کر دیا کرو ایسے تو لوگ تمہارا تماشاہ بنا دیں گے۔

رخشندہ نے اس کہانی کو سن کر استانی کی طرف دیکھا اور بولی مس میں سمجھ گیٴ دوسروں کو اتنا پیار دینا چاہیےجتنا ان کا حوصلہ ہو۔

Share

Add comment